جنوبی وزیرستان کو دو الگ ضلعوں میں تقسیم کرنا وقت کی اہم ضرورت ہے۔محسود گرینڈ جرگہ

جرگہ نیوز آن لائن ) جنوبی وزیرستان ڈی سی کمپاونڈ ٹانک میں محسود قبائل کا گرینڈ جرگہ ,محسود قوم کیلئے علیحدہ ضلع جس کا ہیڈ کوارٹر سپینکئی راغزئی پر بنانے اور محسود قوم کے حدود پر جاری تنازعے کو کمیشن اور مذاکرات کے ذریعے حل کرنے پر محسود قوم کے جرگے نے اتفاق کیا۔

دوسری  جانب جنوبی وزیرستان میں مقیم وزیر قوم نے محسود گرینڈ جرگے کے مطالبے کو سراہا اور اپنی طرف سے کے بھرپور حمایت کرنے کا اعلان بھی  کیا۔ممبر صوبائی اسمبلی و ڈیڈک چیئرمین جناب نصیر اللہ خان وزیر  کے والد  جناب نصراللہ خان بھی ایک ویڈیو  پیغام میں  محسود گرینڈ جرگے کے مطالبے کی حمایت کی اور ساتھ ہی محسود قوم کے دانشمندانہ فیصلے پر ان کو خراج تحسین بھی پیش کیا۔

ڈی سی کمپاونڈ ٹانک میں محسود قوم کے گرینڈ جرگے میں قبائلی عمائدین، ریٹائرڈ سول و ملٹری بیوروکریٹس نے جرگے میں شرکت کی۔ جرگے کہ شرکاء کا کہنا تھا کہ آپریشن راہ نجات کے دوران محسود قوم نے ملکی بقاء اور سالمیت کیلئے بے شمار قربانیاں دی ہیں، مگر محسود قوم اج تک مسائل سے دوچار ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ حکومت کو چاہئے کہ قوم کو درپیش مسائل تر جیحی بنیادوں پر حل کرے۔ جرگے میں محسود قوم کیلئے علیحدہ ضلع جسکا ہیڈ کوارٹر سپینکئی راغزئی پر بنانے اور محسود قوم کے حدود پر جاری تنازعے کو کمیشن اور مذاکرات کے ذریعے سے حل کرنے پر محسود قوم کے عمائدین اور محسود افسران کی نمائندہ تنظیم نے اتفاق کیا۔ جرگہ کے شرکاء نے کہا کہ محسود امن پسند قوم ہے جو مسائل کو مذاکرات اور علاقے میں ترقیاتی منصوبوں پر کام کرنے کی خواہاں ہیں۔ جرگے نے فیصلہ کیا کہ قوم کو درپیش مسائل کے حل کے لئے بہت جلد قوم کے عمائدین، ریٹائرڈ سول و ملٹری بیوروکریٹس اعلی حکام جن میں وزیراعظم پاکستان، وزیر اعلی خیبر پختونخوا، چیف آف آرمی سٹاف، کور کمانڈر پشاور اور آئی جی ایف سی (ساوتھ) شامل ہیں سے ملاقاتیں کریں گے۔

اس قومی جرگے میں محسود آفیسرز فورم کے چیئرمین (ر) کرنل یعقوب محسود، ماوا کے چیئرمین رحمت خان محسود سمیت ملک مسعود خان، ملک سیدرام خان، ملک راپا خان، ملک پیر منہاج خان، ملک نور خان، ملک حاجی محمد، ملک پیر محمد، ملک محمد اقبال، ملک حبیب خان، ملک فضل رحمن و دیگر نے محسود قوم کو درپیش مسائل پر روشنی ڈالی۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button